حمل ٹھہر جانے کی 8 غیر متوقع نشانیاں جو ظاہر کرتی ہیں کہ ایک بچہ تکمیل کے مراحل میں ہے

Posted by

ماہرین طب جانتے ہیں کہ حمل کے دوران عورت کو کن فزیکل، ایموشنل اور سائیکالوجیکل تکالیف سے گُزرنا پڑتا ہے اس لیے وہ عورت کو آگاہ کرتے ہیں کہ یہ سب مشکلات اکھٹی بھی آسکتی ہیں اور مختلف طریقوں سے بھی ظاہر ہو سکتی ہیں۔ اس آرٹیکل میں خواتین میں حمل ٹھہر جانے کی 8 نشانیاں جو اُن کے جسم پر مختلف طریقوں سے ظاہر ہوتی ہیں شامل کی جا رہی ہیں جو ظاہر کرتی ہیں کہ ایک نیا بچہ اپنی تکمیل کے مراحل میں ہے۔

جلد پر ٹیگ: حمل ٹھہر جانے کی ایک علامت یہ بھی ہے کہ عورت کے جسم پر سکن ٹیگ بننے شروع ہو جاتے ہیں اور یہ جسم پر کسی بھی جگہ پیدا ہوتے ہیں لیکن عام طور پر گردن کے قریب دیکھائی دیتے ہیں۔ سکن ٹیگ جلد اور گوشت کا نا مناسب طریقے سے بڑھنے کو کہتے ہیں اور یہ مارمونز میں تبدیلی کی وجہ سے پیدا ہونا شروع کرتے ہیں اور عام طور پر بچے کی پیدائش کے بعد خودبخود ختم ہو جاتے ہیں۔

منہ میں پانی آنا: حمل کے دوران اکثر خواتین کو مُنہ میں بہت زیادہ تھوک آتا ہے اور اس بیماری کو پیٹیلزم گریویڈارم کا نام دیا جاتا ہے جو اُؒلٹی اور متلی کی کفیت سے جُڑی ہُوئی ہے اور ابھی تک ماہرین طب اس کی اصل وجہ نہیں جان پائے لیکن ان کا کہنا ہے کہ بعض اوقات یہ تھوک اتنا زیادہ آتا ہے کہ خواتین کو ٹشو اور ٹاول وغیرہ کی ضرورت پڑ جاتی ہے اور ایسے موقع پر ڈاکٹر سے رابطہ کرنا اُن کے لیے بہتر ثابت ہوتا ہے۔

ذائقہ بدل جانا: حمل ٹھہر جانے کی ابتدائی نشانیوں میں مُنہ کا ذائقہ بدل جاتا ہے اور کھانے کا ٹیسٹ کھٹا اور میٹل جیسا ہو جاتا ہے اور ایسے موقع پر بہت سے افراد آپ کو ایسڈیک کھانے کھانے کا مشورہ دیں گے اور اور بُرش کے بعد نمک یا بیکینگ سوڈا پانی میں ڈال کر کلی کرنے کا مشورہ بھی دیں گے کیونکہ اس سے مُنہ کا ذائقہ بہتر ہوتا ہے۔

مسوڑھوں کی سوزش: خوراک اور ہارمونز میں تبدیلی مسوڑھوں کی سوزش کا سبب بن سکتی ہے اور بعض اوقات اس سے مسوڑھوں سے خون بھی جاری ہو جاتا ہے اور یہ بیماری عام طور پر بچے کی پیدائش کے بعد ختم ہو جاتی ہے۔

ناک بہنا: ماہرین طب کا کہنا ہے کہ حمل ٹھہرنے کے بعد 20 فیصد خواتین کو نزلہ اور زُکام جیسی پریشانی کا سامنا کرنا پڑتا ہے اور یہ علامات ورزش کرنے، ہوا میں نمی کو بحال کر کے اور عام نزلہ و زکام کی ادویات سے ختم ہو جاتی ہیں۔

سانس اکھڑنا: پریگنینسی کی ابتدائی سٹیج پر ہارمونز میں تبدیلی کا پیدا ہونا سانس کے مسائل پیدا کر سکتا ہے اور اس دوران سانس کی ورزش کرنا بہترین ثابت ہوتا ہے۔

سونگھنے کی حس: حمل کے بعد اکثر خواتین کو اس پریشانی سے بھی گزرنا پڑتا ہے اور انہیں کُچھ چیزوں کی بُو بہت زیادہ متاثر کرتی ہے جیسے کوئی پرفیوم، کافی، پیٹرول اور باسی کھانا وغیرہ لیکن یہ علامت ابتدا میں ہی ختم ہو جاتی ہے اور اس علامت کے ظاہر ہونے پر تازہ ہوا میں پیدل چلنا کافی مفید ثابت ہوتا ہے۔

عجیب چیزوں کو کھانے کی چاہت: پریگنینسی کے دوران اکثر خواتین کا عجیب چیزیں کھانے کو دل چاہتا ہے اور کبھی وہ کارن سٹارچ کھانا چاہتی ہیں اور کبھی کچے چاول، چاک، مٹی، صابن اور میٹل وغیرہ کھانا چاہیں گی اور کھانے کی اس چاہت کو Pica کہا جاتا ہے اور اس صُورت میں فوراً ڈاکٹر سے رابطہ کریں۔

Feature image preview credit: https://www.myupchar.com/en, CC BY-SA 4.0, via Wikimedia Commons, image has been edited: