دنیا کی مہنگی ترین گھڑی جسکی قیمت 50 ملین ڈالر سے بھی زیادہ ہے

Posted by

گھڑی وقت بتاتی ہے اور اہل علم کا کہنا ہے کہ وقت دُنیا میں سب سے زیادہ قیمتی چیز ہےجسے ضائع نہیں کرنا چاہیے۔ دنیا کی سب سے پہلی گھڑی کب بئائی گئی اس بارے میں تاریخ کے پاس زیادہ معلومات نہیں ہیں لیکن اس وقت دُنیا میں موجود سب سے پرانی گھڑی 1505 میں بنائی گئی اور یہ گھڑی آج بھی موجود ہے اور ٹھیک کام کر رہی ہے۔

PHN - Watch 1505.jpeg
anonymous, PHN – Watch 1505, CC BY-SA 4.0

یہ گھڑی 1505 میں بنائی گئی اور اسے ایک جرمن گھڑی ساز پیٹر ہیلینن نے تیار کیا، اس گھڑی کا نام پومینڈر واچ ہے۔ یہ گھڑی 1987 میں لندن کی انٹیک اور فلی مارکیٹ میں دیکھی گئی اور 2014 میں اس کی قیمت کا اندازہ 50 سے 80 ملین ڈالر لگایا گیا۔

G:\Pics Sharing\PIXNIO-274709-4681x3100.jfif

کلائی پر باندھی جانی والی دُنیا کی پہلی گھڑی 1868 میں سوئس گھڑی ساز پیٹر فیلپ نے بنائی اور یہ پہلی ریسٹ واچ لیڈیز کے لیے بنی تھی۔ 20 ویں صدی کے آخر تک ریسٹ واچ صرف خواتین ہی پہنا کرتی تھیں اور ان خواتین میں برطانیہ کی ملکہ بھی شامل تھی۔ 20 ویں صدی کے بعد ریسٹ واچ مردوں نے بھی پہننا شروع کی اور پھر یہ گیجٹ دنیا بھر میں بیحد مقبول ہُوا اور کلائی پر اسے باندھنا فیشن انڈسٹری کا حصہ بنا۔

اس وقت دُنیا کی سب سے مہنگی گھڑی بنانے والی کمپنی گراف لگژری گھڑیاں بنانے میں سب سے آگے ہے اور اس کی گراف ڈائمینڈ گھڑی جسکا نا ہلوسینیشن ہے کی قیمت 55 ملین ڈالر ہے۔ یہ گھڑی 110 کیرٹ ہیروں سے بنائی گئی ہے اور یہ ہیرے پلاٹینیم جیسی مہنگی دھات پر جڑے گئے ہیں اور بہت سے کاریگروں کی ہزاروں گھنٹے کی محنت کے بعد اس گھڑی کو بنایا گیا اور اسے 2014 میں بیسل ورلڈ میں پہلی دفعہ پیش کیا گیا۔

گھڑی کا کام وقت بتانا ہے اور 55 ملین ڈالر کی گراف ہلوسینیشن واچ بھی وقت بتاتی ہے اور دور جدید میں آپکو وقت بتانے والی سستی گھڑی ایک ڈالر سے بھی کم پیسوں میں مل جاتی ہے لیکن جب دولت کی کمی نہ ہو تو صاحب ثروت ٹیکنالوجی کے اس پہلے گیجٹ پر اربوں روپئے بھی خرچ کر دیتے ہیں۔