ریڈ یاؤ خواتین کے 5 فٹ لمبے اور 1 کلو وزنی بالوں کے دلچسپ مگر آسان راز

Posted by

چین کا شُمار دُنیا کے اُن ممالک میں ہوتا ہے جہاں صدیوں پُرانی تہذیب اور روایات کو آج بھی فوقیت اور اہمیت دی جاتی ہے اور دُنیا میں تیزی سے ترقی کرتی اس محنتی قوم کی ہر چیز ہی اقوام عالم سے علیحدہ ہے وہ چاہے خوراک ہو، ادویات ہوں، طریقہ علاج ہو، رہن سہن ہو یا کُچھ بھی ہو چین آپ کو علیحدہ نظر آئے گا۔

اس آرٹیکل میں آج آپ کو چین کے ہناگلو یاؤ گاؤں کی سیر کروائی جائے گی اور آپ کی مُلاقات وہاں کی ریڈ یاؤ خواتین سے کروائی جائے گی جن کے بال پانچ فُٹ سے زیادہ لمبے اور وزن میں ایک کلو سے بھی زیادہ وزنی ہیں اور آپ جانیں گے کہ اُن کے اتنے صحت مند اور وزنی بالوں کا راز کیا ہے۔

ہناگلو یاؤ گاؤں چین کے شہر گولین سٹی سے تقریباً 2 گھنٹے کی مُسافت پر دریائے جینشا کے کنارے خوبصورت پہاڑوں کے درمیان واقع ہے جہاں یاؤ قبیلے کے 78 خاندان آباد ہیں جنکی تعداد تقریباً 700 افراد پر مشتمل ہے، 2002 سے پہلے یہ گاؤں باقی چین سے بلکل علیحدہ تھا اور یہاں پہنچنا انتہائی دُشوار کام تھا پھر 2002 میں چین کی حکومت نے سیاحت کو فروغ دینے کے لیے اس گاؤں تک پکی سڑک بنائی اور تب سے یہ گاؤں اور اس کے رہنے والے دُنیا کی توجہ کا مرکز ہیں۔

یاؤ کی خواتین کو ریڈ اس لیے کہا جاتا ہے کیونکہ وہ اپنے لباس کے اوپر خاص ڈیزائنز کی سُرخ رنگ کی جیکٹس پہنتی ہیں اور اس قبیلے کی ہر خاتون اپنی خوبصورتی میں دلکش اضافے کے لیے اپنے بالوں کو لمبا کرتی ہیں اور گنیز بُک آف ورلڈ ریکارڈ میں اپنے گاؤں کو دُنیا کا سب سے لمبے بالوں والا گاؤں ہونے کا اعزاز دلوا چُکی ہیں۔

ریڈ یاؤ خواتین کے نزدیک اُن کے بال دُنیا میں اُن کا سب سے قیمتی اثاثہ ہیں اور وہ انہیں نسل در نسل سے لمبا کر رہی ہیں اور ان کے بالوں کے لمبا ہونے کا راز کوئی پیچیدہ عمل نہیں ہے بلکہ چند آسان تدابیر ہیں اور یہ تدابیر یاؤ خواتین سینکڑوں سالوں سے اخیتار کیے ہُوئے ہیں۔

ان خواتین کی روایت ہے کہ یہ ہر روز دریائے جینشا کے کنارے اپنے بالوں کو مسلسل تین دن تک دھوتی اور پھر چوتھے دن اپنے بالوں کو ایک خاص شیمپو سے دھونے کے بعد بالوں میں خمیر شُدہ چاؤل کے پانی، چکوترے کا چھلکا اور چائے کے پودے کے بیجوں سے نکلے تیل کا لوشن لگاتی ہیں۔

یہ لوشن لگانے کے لیے یاؤ خواتین لکڑی کی کنگھی کا استعمال کرتی ہیں اور اسکے ساتھ اس لوشن کو جڑوں سمیت سارے بالوں میں پھیلا دیتی ہیں اور ریڈ یاؤز کا کہنا ہے کہ اُن کے لمبے بالوں کا یہی راز ہے کہ وہ اپنے اس عمل کو بغیر کسی چُھٹی کے اسی ترتیب سے جاری رکھے ہُوئے ہیں۔

گاؤں کی خواتین کا ماننا ہے کہ جس کے جتنے زیادہ لمبے بال ہوں گے اُسکی اُتنی ہی زیادہ صحت مند اور لمبی زندگی ملے گی، یہ خواتین اپنی ساری زندگی میں صرف ایک بار اپنے بالوں کو کاٹتی ہیں اور ان بالوں کو کاٹنے کے پیچھے بھی اس قبیلے کی انتہائی دلچسپ اور با معنی روایات ہیں۔

File:Ping'an-Yao-Frauen-10-Haarteile-2012-gje.jpg
Gerd Eichmann, CC BY-SA 4.0, via Wikimedia Commons

جب کوئی یاؤ خاتون 18 سال کی ہوجائے تو وہ اپنی زندگی میں پہلی اور آخری بار اپنے بال کاٹتی ہے اور انہیں کاٹنے کا مطلب ہوتا ہے کہ وہ لڑکی بالغ ہو چُکی ہے اور رشتہ ازواج میں منسلک ہونے کے لیے تیار ہےچنانچہ اُس خاتون کی شادی کر دی جاتی ہے۔

کٹے ہُوئے بالوں کو ریڈ یاؤ خواتین پھینکتی نہیں ہیں بلکہ اُنہیں ایک ریبن جیسے کپڑے میں باندھ کر ماں بننے کے بعد اپنے سر کے پیچھے پونی کی طرح لگا لیتی ہیں، یہ پونی گاؤں میں شادی شُدہ اور غیر شادی شُدہ خواتین کی پہچان کی علامت بھی بنتی ہے، ان خواتین کے لمبے بال معاشرے میں ان کے مقام کو ظاہر کرنے کی بھی ایک علامت ہے جسے وہ بیٹی، بیوی اور ماں بننے کے بعد مختلف انداز سے بناتی ہیں۔

File:Yao Women 3.jpg
S.D.86, CC BY-SA 3.0, via Wikimedia Commons

غیر شادی شُدہ یاؤ خواتین اپنے لمبے بالوں کے اُوپر کالے رنگ کی پگڑی پہنتی ہیں اور 1980 سے پہلے تک اس قبیلے کی روایت تھی کے غیر شادی شُدہ عورت کے بال کوئی مرد نہیں دیکھتا تھا اور شادی کے بعد خاتون کا شوہر وہ پہلا مرد ہوتا تھا جو اس کے خوبصورت بالوں کا نظارہ لیتا تھا ۔

یاؤ خواتین عام طور پر فیملی یا قبیلے سے باہر شادی نہیں کرتیں لیکن اگر کوئی ریڈ یاؤ کسی باہر کے مرد سے شادی کرے تو اُس مرد کے لیے ضروری ہوتا ہے کہ وہ لڑکی کیساتھ اُس کے والدین کے گھر میں 3 سال تک بطور گھر کا فرد ہونے کے رہے اور اُن کیساتھ کام کرے۔

File:Yao Woman.jpg
S.D.86, CC BY-SA 3.0, via Wikimedia Commons

شادی شُدہ خواتین جو ابھی ماں نہیں بنی ہوتی وہ بالوں کو اپنے ماتھے پر باندھ لیتی ہیں جسکا مطلب یہ ہوتا ہے کہ وہ ہونے والے بچے کا انتظار کر ہی ہیں اور ابھی ماں نہیں بنیں۔ ہناگلو یاؤ اپنی خُوبصورتی اور دلچسپ اور عجیب روایات کی وجہ سے پُوری دُنیا کے سیاحوں کا مرکز نگاہ بنا ہُوا ہے اور اگر آپ بھی اس خوبصورت گاؤں اور اسے کے دلچسپ مکینوں کو دیکھنا چاہتے ہیں تو چین ضرور جائیں۔