مہندی کے پودے کے 10 حیران کن ادویاتی فائدے جن میں شفا ہے

Posted by

مہندی کے متعلق عام طور پر لوگ یہی سمجھتے ہیں کہ اس سے خواتین ہاتھوں اور پیروں پر نقش و نگار بنا کر اپنی خوبصورتی میں اضافہ کرتی ہیں لیکن علم طب کے ماہرین جانتے ہیں کہ مہندی بیش قیمت ادویاتی خوبیوں کی حامل ہے اور صدیوں سے طب ایوردیک میں اس کے پتے، پھول اور چھال بہت سی ادویات میں استعمال ہورہے ہیں۔

File:Henna (Lawsonia inermis).jpg
Mokkie, CC BY-SA 3.0, via Wikimedia Commons

مہندی کے پودے میں جسم کے لیے طاقت ہے یہ کڑوا ہوتا ہے اور ہر کڑوی چیز میں شفا ہے یہ جسم کے کام کرنے کی صلاحیت کو بڑھاتاہے اور نظام انہظام کو بہتر بناتا ہے اور میٹابولیزم کو تیز کرتاہے، اس میں اینٹی پیریٹک خوبیاں ہوتی ہیں جو بخار کو کم کرتی ہیں اس کا مسلسل استعمال آہستہ آہستہ جسم کے افعال کو درست کر دیتا ہے اور یہ نروس سسٹم کو ٹھنڈا کرنے میں اپنا ثانی نہیں رکھتی اور آج اس آرٹیکل میں مہدی کے 10 ایسے فائدوں کو شامل کیا جارہا ہے جن سے آپ کو اندازہ ہوگا کہ یہ پودا کس قدر خصوصیات کا حامل ہے۔

نمبر 1 سر درد سے نجات

حنا کے پھول گرمی اور تیز دھوپ سے ہونے والی سردرد کو ٹھیک کرنے کے لیے ادویاتی خوبیاں رکھتے ہیں۔ حنا کے پھول کو کپڑے میں رکھ کر اسے سرکے میں ڈبو لیں اور اس پٹی کو ماتھے پر رکھ لیں اس سے ہیٹ سٹروک سے پیدا ہونے والی سردرد ختم ہو جائے گی۔

نمبر 2 گھٹیا اور جوڑوں کا درد

مہندی کو جب ہاتھوں میں لگایا جاتا ہے تو اس سے ایسی ٹھنڈک پیدا ہوتی ہے جو جسم کو پُرسکون اور اعصاب سے تناؤ کو ختم کرنے کا باعث بنتی ہے اور اس سے اینٹی اینفلامیٹری ایفکٹ پیدا ہوتے ہیں جو جسم میں جوڑوں کے درد اور سوزش کا علاج کرتے ہیں۔

نمبر 3 جلد کے مسائل

قدیم طب میں حنا کو زخموں کو تیزی سے بھرنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے اور جلنے کے زخموں کو راحت دینے کے لیے اس کی پیسٹ زخم پر لگائی جاتی ہے اور یہ ایکزیما (ایک جلد کی بیماری جس میں جلد سُرخ، خشک اور خارش زدہ ہوتی ہے) کا بھی علاج ہے۔ حنا کے پتوں میں اینٹی سیپٹک خوبیاں ہوتی ہیں جو جلد کو نقصان پہنچانے والے بہت جراثیموں کو ختم کرتی ہی خاص طور پر رنگ وارم کو پیدا نہیں ہونے دیتی۔

نمبر 4 بال گھنے کرتی ہے

حنا بالوں کو تندرست اور توانا کرتی ہے یہ بالوں کے کیٹیکلز کو بند کرکے بالوں کا ٹوٹنا اور گرنا روکتی ہے اور بالوں میں چمک کو بڑھاتی ہے اور صدیوں سے بالوں کی خشکی اور سکری کا ایک قدرتی علاج ہے۔

نمبر 5 بخار ختم کرتی ہے

اگر حنا کے پتوں کو کپڑے میں باندھ کر گولا سا بنا لیا جائے اور اس گولے کو پانی میں بگھو کر ہاتھوں میں پکڑا جائے تو یہ تیز بخار میں جسم کے درجہ حرارت کو ٹھنڈا کرنے اور بخار کو ختم کرنے کا باعث بنتی ہے۔

نمبر 6 مسوڑھے مضبوط بناتی ہے

حنا کی اینٹی بیکٹریل خوبیاں مُنہ میں پیدا ہونے والے جراثیموں کا خاتمہ کرتے ہے اور اگر اس کے پتوں کو چبایا جائے تو یہ مسوڑھوں کی بیماریاں اور مُنہ میں پیدا ہونے والے السر کا قدرتی علاج ثابت ہوتی ہے۔

نمبر 7 دماغ کو تقویت دیتی ہے

حنا سے حاصل ہونے والا ایزینشل آئل ذہنی تناؤ اور نروس سسٹم کو ٹھنڈا کرنے کا باعث بنتا ہے یہ غُصے کو کم کرتا ہے اور ڈپریشن اور اینگزائٹی کو پیدا ہونے سے روکتا ہے۔

نمبر 8 پیچش کا علاج ہے

حنا کے بیج صدیوں سے طب ایوردیک میں پیچش کے علاج کے لیے استعمال کیے جاتے ہیں ان بیجوں کو پیس لیں اور اسے دیسی گھی میں مکس کر کے چھوٹی چھوتی بالز بنا لیں اور پانی کیساتھ استعمال کریں یہ پیچش کے خاتمے کا باعث بنیں گے۔

نمبر 9 خون سے فاسد مادے صاف کرتی ہے

حنا کے پودے کی چھال اور پتے پانی میں بگھو کر اس پانی کو پینا جسم سے فاسد مادوں کو خارج کرنے کا باعث بنتا ہے اور یہ جگر اور تلی کو تقویت دیتا ہے اور سارے جسم کی صحت پر اچھے اثرات مرتب کرتا ہے۔

نمبر 10 بلڈ پریشر نارمل کرتی ہے

حنا کی اس خوبی کو ایوپیتھی میں بلکل نظر انداز کیا گیا ہے لیکن یہ دل کے لیے کسی اکسیر سے کم نہیں ہے اور اگر حنا کے بیج اور پتوں کا پانی استعمال کیا جائے تو یہ جسم میں ہائپوٹینسیو ایفکٹ پیدا کرتا ہے جس سے دل میں خون لیجانے والی رگوں سے تناؤ کم ہوتا ہے اور بلڈ پریشر نارمل ہوتا ہے یہ خون لیجانے والی رگوں میں پلاک اور چکنائی کو جمنے سے روکتی ہے جس سے دل کا دورہ اور فالج جیسی بیماریوں کا خطرہ ختم ہو جاتا ہے۔

Featured Image Preview Credit: Rajettan, CC BY-SA 4.0, via Wikimedia Commons