وٹامن ڈی کی کمی موٹاپے کا سبب ہو سکتی ہے جانیے اس سے کیسے بچنا ہے

Posted by

وٹامن ڈی انسانی صحت کے لیے ایک انتہائی اہم وٹامن ہے جسے سن شائن وٹامن بھی کہا جاتا ہے کیونکہ جب سُورج کی روشنی ہماری جلد پر پڑتی ہے تو اس سے جسم میں وٹامن ڈی پیدا ہوتا ہے اسکے علاوہ چند کھانے بھی ایسے ہیں جن میں وٹامن ڈی پایا جاتا ہے جیسے انڈے کی زردی وغیرہ۔

ہمارے ملک پاکستان میں عام طور پر اگرچہ تیز دھوپ پڑتی ہے لیکن اسکے باوجود ایک رپورٹ کے مطابق 80 فیصد سے زیادہ پاکستانی کسی نہ کسی طرح وٹامن ڈی کی کمی کا شکار ہیں اور ایک اور رپورٹ کے مطابق دُنیا کے پچاس فیصد انسانوں میں وٹامن ڈی کی کمی یا زیادتی پائی جاتی ہے۔

صحت مند زندگی گزارنے کے لیے وٹامن ڈی انتہائی ضروری چیز ہے کیونکہ یہ ہماری ہڈیوں، دماغ، قوت مدافعت کو فعال رکھنے کے لیے انتہائی ضروری چیز ہے اور ماہرین کا کہنا ہے کہ اگر وٹامن ڈی روزانہ مناسب مقدار میں کھایا جا رہا ہے یا سُورج روشنی سے حاصل کیا جا رہا ہے تو یہ جسم میں موٹاپا پیدا ہونے سے روکتا ہے۔

اس آرٹیکل میں ہم جانیں گے کہ کیسے وٹامن ڈی کی کمی سے جسم میں چربی پیدا ہوتی ہے اور وزن بڑھتا ہے اور اسے کیسے روکا جا سکتا ہے۔

موٹاپے اور وٹامن ڈی کا تعلق

C:\Users\Zubair\Downloads\obesity-gaecb229d0_1280.png

ماہرین کا کہنا ہے کہ موٹے افراد میں عام طور پر وٹامن ڈی کی کمی دیکھی جاتی ہے اس لیے کہا جا سکتا ہے کہ اس وٹامن کی کمی موٹاپے کو دعوت دیتی ہے۔ موٹی خواتین پر ہونے والی ایک تحقیق میں دیکھا گیا کہ جن خواتین کو کھانے کیساتھ وٹامن ڈی کے سپلیمنٹ دئیے گئے اُن کے بڑھے ہُوئے وزن میں دوسری خواتین کی نسبت زیادہ جلدی کمی پیدا ہُوئی۔ ایک اور تحقیق کے مطابق ایسے افراد جو وزن کم کرنا چاہتے ہیں اور اسکے لیے کوشش یعنی ورزش اور خوراک میں تناسب پیدا کر رہے ہیں اگر وہ وٹامن ڈی کے سپلیمنٹ استعمال کرنا شروع کریں تو اُن کو وزن کم کرنے میں آسانی پیدا ہوتی ہے۔

موٹاپے میں وٹامن ڈی کیوں کم ہوتا ہے

ماہرین کا کہنا ہے کہ وٹامن ڈی جسم میں موجود چربی میں جمع ہوتا ہے اور ایسے افراد جو موٹاپے کا شکار ہوتے ہیں اُنہیں اُن کے بڑھے ہُوئے وزن کے باعث عام لوگوں سے زیادہ وٹامن ڈی کی ضرورت ہوتی ہے تاکہ اُن کا جسم عام انسانوں کی طرح ضروری افعال سر انجام دے سکے اور ایسے موقع پر جب موٹے افراد اپنا زیادہ وقت آرام پسندی میں گزارتے ہیں اور کم باہر جاتے ہیں اور خوراک سے بھی وٹامن ڈی پُوری مقدار میں حاصل نہیں کرتے تو ایسی صورت میں ان میں اس وٹامن کی کمی پیدا ہو جاتی ہے۔

طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ موٹاپے کی صُورت میں عام آدمی کی نسبت جسم کو دو سے تین گُنا زیادہ وٹامن ڈی کی ضرورت ہوتی ہے اور ایسے موقع پر جب جسم میں وٹامن ڈی کی کمی پیدا ہو رہی ہو تو جسم پر درجہ ذیل نشانیاں ظاہر ہونا شروع ہو جاتی ہیں۔

  • ہڈیوں میں درد
  • ہڈیوں کا نرم ہونا
  • مرگی کا دورہ
  • دانتوں کی بیماریاں
  • دل کی بیماریاں
  • بالوں کا گرنا
  • پٹھوں میں درد
  • بلڈ پریشر کا بڑھنا
  • بھوک کم لگنا
  • کمزوری
  • پیاس کا زیادہ لگنا اور پیشاب زیادہ آنا
  • موڈ کا خراب رہنا

ان نشانیوں میں سے کوئی ایک بھی نشانی اگر جسم پر ظاہر ہو تو فوراً ڈآکٹر سے رابطہ کرنا ضروری ہو جاتا ہے تاکہ بیماری کی اصل وجہ کا پتہ چل سکے۔

وٹامن ڈی کی کمی جاننے کا طریقہ

اگر جسم میں وٹامن ڈی کی کمی ہو تو اسے جاننے کے لیے ڈاکٹر حضرات خون کے نمونے لیباٹری میں ٹیسٹ کرواتے ہیں جس پتہ چل جاتا ہے کہ جسم میں وٹامن ڈی کی کمی ہے یا زیادتی ہے۔ وٹامن ڈی کی کمی کی صورت میں ڈاکٹر حضرات اس وٹامن کے سپلیمنٹ وغیرہ تجویز کرتے ہیں اور دن کا کُچھ وقت دھوپ میں لازمی گزارنے کا کہتے ہیں۔